پانچ سو ڈالر

article-108.jpg

وہ محمد منور کو تلاش کر رہا تھا‘ اس نے محمد منور کی تلاش میں بے شمار اشتہار دیئے تھے‘ وہ اسے نیویارک‘ واشنگٹن‘ شکاگو اور ہیوسٹن میں بھی تلاش کرتا رہا تھا‘ اس نے اسے فرینکفرٹ‘ میلان‘ ایمسٹرڈیم‘ پیرس‘ لندن اور برسلز میں بھی تلاش کیا تھا اور وہ اس کی تلاش میں ٹوکیو‘ بیجنگ اور منیلا بھی گیا تھا لیکن محمد منور اسے نہیں ملا۔ وہ زندگی میں ایک بار اپنے محسن سے ملنا چاہتا تھا‘ وہ سمجھتا تھا اگر محمد منور نہ ہوتا تو وہ آج اربوں روپے کا مالک نہ ہوتا‘ اس کی کمپنی چھ براعظموں میں کام نہ کر رہی ہوتی اور وہ پانچ چھ ہزار لوگوں کا چیف ایگزیکٹو نہ ہوتا۔ اس کا کہنا تھا اگر محمد منور زندہ نہیں تو اسے اس کے خاندان کا کوئی فرد چاہیے‘ اس کا کوئی بھائی ہو‘ اس کا والد ہو‘ اس کی بیوی‘ اس کا کوئی بچہ یا پھر اس کی کوئی بچی ہو‘ منور کے لواحقین میں سے کوئی نہ کوئی شخص تو دنیا میں موجود ہو گا‘ وہ بس اس شخص سے ملنا چاہتا تھا‘ اس کو اس کا حصہ دینا چاہتا تھا‘ اس کی مدد کرنا چاہتا تھا تا کہ اس کی روح کو قرار آ جائے‘ وہ مطمئن ہو جائے۔ یہ کہانی میرے ایک دوست نے سنائی تھی اور یہ میرے دماغ میں چبائی ہوئی چیونگم کی طرح چپک گئی تھی‘ کہانی کے مرکزی کردار کا نام شفیق الحق (نام فرضی ہے) تھا‘ وہ آج سے 35 سال پہلے امریکا گیا‘ وہ امریکا میں برگر کی دکان پر کام کرتا تھا اور شام کے وقت ایم بی اے کی کلاسز لیتا تھا‘ اس کی زندگی گھڑی کی سوئیوں کی طرح چل رہی تھی‘ کلاک وائز‘ ٹک ٹک ٹک‘ صبح ایک مخصوص وقت پر جاگنا‘ آنکھیں ملتے ملتے کپڑے تبدیل کرنا‘ کافی کا مگ اٹھانا اور زیر زمین ٹرین میں سوار ہو جانا‘ راستے میں مشین کے ذریعے شیو کرنا ‘ برگر شاپ پر پہنچ جانا‘ شام تک سیاحوں سے ٹپ وصول کرتے رہنا ‘کچن صاف کرنا‘ کچرے کے ڈبے سے کاغذی پیکنگ‘ پلیٹیں اور ٹرے نکالنا اور جس دن سویپر کی چھٹی ہوتی‘ اس دن باتھ روم بھی صاف کرنا‘ پانچ بجے دو برگر اٹھا کر کالج پہنچ جانا‘ لیکچر سننا‘ نوٹس لینا‘ لائبریری سے کتابیں اٹھانا‘ اسائنمنٹ کی پلاننگ کرنا اور رات دس بجے کمرے کی طرف چل پڑنا۔ وہ اپنے دوست کے ساتھ کمرہ شیئر کرتا تھا‘

اس کا دوست کی ڈیوٹی کرتا تھا اور صبح کمرے میں پہنچتا تھا جبکہ یہ رات کے وقت آتا تھا چنانچہ ایک بستر سے دونوں کا گزارہ ہو جاتا تھا‘ یہ زندگی خوفناک بھی تھی‘ پھیکی بھی‘ بے آرام بھی اور تلخ بھی کیونکہ اس زندگی میں وہ خود کو بھی پال رہا تھا‘ اپنی تعلیم کا خرچ بھی اٹھا رہا تھا اور پاکستان اپنی فیملی کو بھی ’’ ہیلپ آئوٹ‘‘ کر رہا تھا‘ اس ساری روٹین میں اس کی واحد تفریح ویک اینڈ پر نائٹ کلب کے دو گھنٹے تھی‘ وہ دو گھنٹے ناچ کود کر اپنی ساری فرسٹریشن دور کر لیتا تھا لیکن پھر اس کی زندگی بحران کا شکار ہو گئی‘ وہ یوں ہی چلتے چلتے ایک مسئلے کا شکار ہوا اور ایک ایسی بند گلی میں آ گیا جس کے آخر میں سزائے موت اس کا انتظار کر رہی تھی‘ وہ بری طرح پھنس گیا‘ ہوا کیا؟ ہوا یہ کہ وہ ایک رات کلب سے نکلا‘ کلب کے باہر دو گروپوں میں لڑائی ہوگئی اور ایک بے چاری لڑکی اس لڑائی کے درمیان پھنس گئی‘ اس نے لڑکی کو بچانے کی کوشش کی‘ اس دوران گولی چل گئی‘ لڑکی کوگولی لگی اور لڑکی نے اس کے ہاتھوں میں دم توڑ دیا‘ وہ گھبرا گیا‘ اس نے لڑکی کی نعش فٹ پاتھ پر رکھی اور وہاں سے بھاگ گیا‘ پولیس آئی‘ پولیس نے تفتیش شروع کی تو ایک ہفتے میں اس کے فلیٹ تک پہنچ گئی‘ وہ گرفتار ہو گیا‘یہ قتل بعد ازاں اس کے ذمے لگ گیا‘ وہ بے گناہ تھا لیکن سارے شہر میں کوئی شخص اس پر یقین کرنے کیلئے تیار نہیں تھا‘ تمام شواہد بھی اس کے خلاف جا رہے تھے‘

اسی دوران اس کے کاغذات بھی غلط نکل آئے‘ اس نے تعلیم مکمل کرنے کیلئے کالج میں جعلی دستاویزات جمع کرا رکھی تھیں چنانچہ وہ بری طرح پھنس گیا لیکن پھر ایک دن دلچسپ واقعہ پیش آیا‘ اس کا کیس فائنل ہیرنگ کیلئے عدالت میں پیش ہوا‘ کیس کا اصل جج ’’ میڈیکل لیو‘‘ پر چلا گیا اور اس کی جگہ ایک خاتون جج کیس سننے کیلئے آ گئی‘ سماعت کے دوران جج نے اس سے اس کی قومیت پوچھی‘ اس نے روتی ہوئی آواز میں بتایا ’’ پاکستان‘‘ جج نے اومائی گاڈ کہا اور اس سے پوچھا ’’ تم منور کو جانتے ہو‘‘ اس نے انکار میں سر ہلا دیا‘ جج نے کندھے اچکائے اور سماعت شروع کرا دی لیکن اس بار عدالت کا رویہ بالکل مختلف تھا‘ جج نے وکلاء سے چند ایسے سوال پوچھے جس کا اس کو براہ راست فائدہ پہنچ رہا تھا‘ قصہ مختصر اسی سماعت کے دوران جج نے نہ صرف اسے باعزت بری کر دیا بلکہ پولیس کو اسے لاکھ ڈالر ہرجانہ دینے کا حکم بھی دے دیا‘ وہ رہا ہو گیا۔ شفیق الحق رہائی کے چند دن بعد شکریہ ادا کرنے کیلئے جج کے گھر چلا گیا لیکن جج کا کہنا تھا ’’ تمہیں میری بجائے محمد منور کا شکریہ ادا کرنا چاہیے‘‘ اس نے حیران ہو کر پوچھا ’’ محمد منور کون ہے‘‘ جج نے مسکرا کر جواب دیا ’’ محمد منور پاکستانی تھا‘ نیویارک شہر میں ٹیکسی چلاتا تھا اور میں نے اس فیصلے کے ذریعے محمد منور کا قرض ادا کرنے کی کوشش کی ہے‘‘ جج نے بتایا‘ اس کے والد میکسیکو کے رہنے والے تھے‘ وہ کینسر کے مریض تھے‘

اس نے والد کے علاج کیلئے اپنا فلیٹ بیچا‘70 ہزار ڈالر لئے‘ وہ یہ رقم ایک بینک سے دوسرے بینک لے جا رہی تھی لیکن سفر کے دوران رقم کا تھیلا ٹیکسی میں بھول گئی‘ ٹیکسی نے اسے اتارا اور آگے نکل گئی‘ وہ بے بس ہو کر رہ گئی کیونکہ اس کا والد موت کے بستر پر پڑا تھا‘ وہ واحد اثاثہ بیچ چکی تھی اور رقم گم ہو گئی تھی‘ اس نے ٹیکسی ڈرائیور کو تلاش کرنے کی کوشش کی لیکن وہ نہ ملا‘ وہ مایوس ہو گئی لیکن ایک شام اس کے دروازے کی گھنٹی بجی‘ اس نے دروازہ کھولا تو ٹیکسی ڈرائیور دروازے پر کھڑا تھا‘ ڈرائیور نے بتایا وہ مسلسل پانچ دن سے اسے تلاش کر رہا ہے اور وہ بڑی مشکل سے اس تک پہنچا ہے‘ ڈرائیور نے رقم کا تھیلا اسے پکڑا دیا‘ اسے سلام کیا اور واپس مڑ گیا‘ جج نے اسے انعام دینے کی کوشش کی لیکن اس نے ’’ یہ میرا فرض تھا‘‘ کہہ کر معذرت کر لی‘ جج نے جاتے جاتے اس کا نام پوچھا اس نے بتایا اس کا نام محمد منور ہے اور وہ پاکستانی ہے۔ اس کے بعد نئی کہانی شروع ہو جاتی ہے‘جج اپنے والد کو رقم بھجوانے کیلئے بینک گئی تو اس کے والد کا انتقال ہو گیا‘ والد کے انتقال کے بعد اس نے اس رقم سے قانون کی اعلیٰ تعلیم حاصل کی‘ جوڈیشری کا امتحان دیا‘ پاس کیا اور جج بن گئی اور آج وہ پاکستان کے تمام لوگوں کو محمد منور سمجھتی ہے اور اس کی عدالت میں جس پاکستانی کا کیس آتا ہے وہ محمد منور کا قرض اتارنے کی کوشش کرتی ہے۔ جج نے بتایا اس نے محمد منور کو تلاش کرنے کی بے تحاشا کوشش کی لیکن وہ نہ ملا۔ جج کا کہنا تھا ’’ محمد منور کو اب تم تلاش کرو اور اپنی اور میری طرف سے اس کا شکریہ ادا کرو‘‘ شفیق الحق کی زندگی تبدیل ہو گئی‘ اس نے پولیس سے لاکھ ڈالر وصول کئے‘ ایک چھوٹی سی ٹریڈنگ کمپنی بنائی‘

یہ کمپنی چل نکلی اور وہ آہستہ آہستہ کروڑ پتی ہو گیا‘ اس کی کمپنی ملٹی نیشنل کمپنیوں کیلئے جاپان‘ چین اور منیلا سے خام مال خریدتی ہے اور بعد ازاں تیار مصنوعات مڈل ایسٹ اور یورپ بھجواتی ہے‘ وہ اس سارے عرصے کے دوران محمد منور کو تلاش کرتا رہا‘ اس نے نیویارک‘ واشنگٹن‘ شکاگو اور لاس اینجلس کے ہر ٹیکسی ڈرائیور سے منور کا پتہ پوچھالیکن وہ اسے نہ ملا‘ وہ محمد منور کو تلاش کرتا رہا‘ تلاش کرتا رہا ’’ پوچھو کیوں؟‘‘ میرے دوست نے کہانی کے آخر میں مجھ سے پوچھا‘ میں نے گھبرا کر انکار میں سر ہلا دیا‘ وہ بولا ’’ اس لئے کہ شفیق الحق نے اپنے ہر کاروبار میں محمد منور کا دس فیصد شیئر رکھا ہوا تھا اور وہ جلد سے جلد اس کو اس کا حق پہنچانا چاہتا تھا چنانچہ وہ اسے تلاش کرتا رہا‘ تلاش کرتا رہا‘‘۔ میرے لئے یہ ایک حیران کن کہانی تھی‘ یوں محسوس ہوتا تھا جیسے میں کوئی فلم دیکھ رہا ہوں اور فلم کے سین اور سچویشن تیزی سے بدل رہی ہے‘ میں نے بے چینی سے پوچھا ’’ لیکن کیا اسے پھر محمد منور ملا‘‘ کہانی سنانے والے نے ہاں میں سر ہلایا‘ ایک لمبی سانس لی اور دکھی آواز میں بولا ’’ ہاں لیکن نیویارک کے ایک ہسپتال میں آخری سانسیں لیتا ہوا‘‘ میں حیرت سے اس کی طرف دیکھنے لگا‘ وہ بولا ’’ شفیق کو ایک پاکستانی ٹیکسی ڈرائیور نے محمد منور کا ایڈریس تلاش کر دیا‘ وہ منور کی تلاش میں نکلا تو پتہ چلا وہ نیویارک کے ایک چھوٹے سے ہسپتال میں شدید زخمی حالت میں پڑا ہے‘ شفیق ہسپتال پہنچا‘ محمد منور سے ملا‘ اس سے جج کی کہانی کی تصدیق کروائی‘ محمد منور ابھی اس کے سوال کا جواب دے رہا تھا کہ اس کی روح قفس عنصری سے پرواز کر گئی‘‘ مجھے جھٹکا لگا اور میں نے اس سے پوچھا ’’ محمد منور کو کیا ہوا تھا‘‘ میرے دوست نے لمبی آہ بھری ’’ محمد منور نے اپنی ٹیکسی میں سوار ایک شخص سے سے پانچ سو ڈالر لوٹنے کی کوشش کی تھی‘ مسافر کے پاس ریوالور تھا‘ اس نے محمد منور کو گولی مار دی‘ پولیس آئی‘ اسے زخمی حالت میں ہسپتال شفٹ کیا‘ محمد منور نے اپنا جرم تسلیم کر لیا اور تین دن کی کشمکش کے بعد انتقال کر گیا‘‘۔

کالم : جاوید چوہدری

جاوید چوہدری

جاوید چوہدری پیشے کے لحاظ سے شعبہ صحافت سے منسلک ہیں، ان کے سب سے قابل ذکر کالم ’’ زیرو پوائنٹ ‘‘ خاص طور پر پاکستان کے عوام یوتھ اور پاکستان کے مسلمانوں پر بہت بڑا اثر ہے

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Top