“نیا جوڑا”

naya-Jora.jpg

کیا ہوا ابا کو یہ چوٹیں کیسے آئیں ؟؟؟
وہ اسوقت گھر کی کچی حویلی میں جھاڑو لگا رہی تھی جب اسکا ہمسایہ چچا رحمت اسکے باپ کو کاندھے کا سہارا دیے گھر کے اندر داخل ہوا ،،،،،،،
لے پتر، سنبھال اپنے باپ کو اور سمجھا دے اسے کہ چھوڑ دے یہ چوری چکاری، کسی دن اپنی جان کو بڑے عذاب میں ڈالے گا یہ اپنی اس عادت کیوجہ سے، آج پھر بڑی مشکلوں سے چھڑوا کے لایا ہوں اسے تھانے سے،،،،،
گڈی نے چچا رحمت کی بات پر باپ کیطرف شکائتی نظروں سے دیکھا تو فضل دین نے بیٹی سے نظریں چراتے ہوئے سر جھکا لیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کیوں کرتا ہے ابا تو یہ چوری چکاری، چھوڑ کیوں نہیں دیتا یہ سب؟ کتنی بار سمجھایا ہے میں نے تجھے مگر تو میری ایک نہیں سنتا،،،،،
گڈی اپنے باپ کے زخموں پر مرہم لگاتے وقت رو رو کر شکایت کرنے لگی،
“یہ سب تیرے لیے ہی تو کرتا ہوں ، تونے ہی تو کہا تھا کہ ایک عرصے سے تونے نیا جوڑا نہیں پہنا””””
فضل دین نے بیٹی کی آنسوؤں سے دھندلائی ہوئی آنکھوں میں جھانکتے ہوئے کھسیانی آواز میں کہا،،،،،
ایسا نیا جوڑا نہیں مانگا تھا میں نے ابا جو تو چوری کر کے لائے، تیری حق حلال اور محنت کی کمائی سے چاہیے مجھے نیا جوڑا، ، نہیں تو رہنے دے ، مت کر تو ایسے ناجائز کام میرے جوڑے کےلئے ،،
ماں باپ تو اپنی اولاد کی خوشی کے لیے نجانے کتنے جتن کرتے ہیں ایک تو ہے جو میری خاطر محنت مزدوری بھی نہیں کر سکتا ،،
وہ باپ کے ہاتھوں میں گرم دودھ کا پیالہ پکڑا کر ناراضگی سے منہ پھیرتے ہوئے بولی،،،،،
اچھا سن تو سہی، ناراض نہ ہو، آئندہ میں ہرگز چوری نہیں کروں گا، جیسا تو کہے گی ویسا ہی کروں گا، اپنی محنت کی کمائی سے اپنی گڈی کے لیے نیا جوڑا بھی لاؤں گا،،،،
فضل دین اپنی ناراض بیٹی کو منانے لگا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

“بس رہنے دے ابا، تو اور تیرے وعدے ۔۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ” گڈی نے باپ کی بات پر اعتبار نا کرتے ہوئے اپنی ناراضگی برقرار رکھی،،،،،
اچھا ٹھیک ہے پھر، جب تک تو مان نہیں جاتی میں بھی یہ دودھ نہیں پیوں گا،،،،
فضل دین نے بچوں کیطرح روٹھتے ہوئے دودھ کا پیالہ واپس رکھ دیا،،،،
یہ دیکھ کر گڈی نے پلٹ کر باپ کا ہاتھ تھاما اور اپنے سر پر رکھتے ہوئے بولی “کھا میری قسم ابا! کہ آئندہ کبھی چوری نہیں کرے گا؟؟؟؟؟؟
“تیری قسم” ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فضل دین نے بیٹی کا ماتھا چومتے ہوئے عہد کیا،،،،
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

گڈی کی ماں کا دنیا سے گزر جانے کے بعد واحد سہارا اسکا باپ تھا، جسے وقت اور حالات
نے معمولی چور بنا دیا تھا،،،
13سال کی معصوم گڈی فضل دین کے بھی جینے کا واحد سہارا تھی،،،،،،،،،،،،،،،
فضل دین جو عموماً شام تک گھر لوٹ آیا کرتا تھا ، آج خاصی دیر ہو چکی تھی اور وہ اب تک گھر نہیں آیا تھا،،
ساری رات باپ کا بےچینی سے انتظار کرنے کے بعد گڈی کو مدد مانگنے کی غرض سے اپنے ہمسائے چچا رحمت کا خیال آیا، ابھی وہ اسکے گھر کیطرف جانے ہی والی تھی کہ اسے اپنے گھر کے باہر دروازے پر کچھ لوگوں کی آوازیں سنائی دیں ،
“دروازہ کھول گڈی پتر”
چچا رحمت کی اس آواز کیساتھ ہی دروازے پر کھڑے باقی لوگوں کی آوازیں بھی قدرے بلند ہونے لگیں،
وہ زوروں سے دھڑکتے دل کیساتھ دوڑتی ہوئی دروازے کیطرف لپکی،،،
دروازے کے باہر کا منظر دیکھتے ہی اسکے پاؤں تلے سے جیسے زمین کھسک گئی، ،،،،
محلے کے چند افراد چارپائی پر رکھا اسکے باپ کا لہولہان جسم کاندھوں پر اٹھائے کھڑے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“کیا ہوا میرے ابا کو” ؟۔۔۔ اسنے حیرت اور غمزدہ نگاہوں سے چچا رحمت کیطرف دیکھ کر سوال کیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“کل رات پولیس نے کچھ مقامی ڈاکوؤں کا encounter کیا ہے، سنا ہے تیرا باپ فضل دین بھی انہی ڈاکوؤں کا ساتھی تھا””””
شدتِ غم اور صدمے کے باعث بیہوش ہونے سے پہلے یہ وہ آخری الفاظ تھے جو گڈی کے کانوں میں پڑے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

“گڈی پتر حوصلہ رکھ اور اپنے ابا کا آخری دیدار کر لے “”””
محلے کے کچھ لوگ اسکے گھر کی کچی حویلی میں اسکے باپ کی میت کےساتھ بیٹھے گڈی کے ہوش میں انے کا انتظار کر رہے تھے،،،،،
مگر گڈی ہوش میں انے کے بعد بھی سکتے میں تھی جو اپنے باپ کی رخصت ہوتی میت کو خالی خالی پتھرائی ہوئی آنکھوں سے دیر تک دیکھتی رہی، معلوم ہوتا تھا جیسے اسکی رگوں میں خون اور آنکھوں میں آنسو تھم سے گئے ہوں ،،،،،،
معصوم گڈی اپنی ماں کے بعد آج اپنا واحد آسرا ،،،،، اپنے ابا کو بھی ہمیشہ کے لیے کھو چکی تھی،،،،
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

گڈی پر گزری اس قیامت کو آج تیسرا روز تھا،،،
اپنے پھٹے پرانے کپڑوں کے چند ایک جوڑوں کو تہہ لگا کر صندوق میں رکھتے وقت اسے اپنے ابا کا کیا وعدہ یاد آ گیا،،،
“میں اپنی گڈی کے لیے حق حلال کی کمائی سے نیا جوڑا لاؤں گا”
یہ خیال اتے ہی اسکے ضبط کے سارے بندھن ٹوٹ گئے ،،،،،،،
نہیں چاہیے مجھے نیا جوڑا،
میں یہی پرانے کپڑے پہن لوں گی،، بس تو واپس آجا ابا!!! اپنی گڈی کے پاس واپس آجا!!
وہ صندوق میں رکھے پرانے کپڑوں کو دیکھتی اور بلک بلک کر روئے جا رہی تھی ، اسے ان پھٹے پرانے کپڑوں میں اپنے باپ کا لہولہان چہرہ دکھائی دے رہا تھا،،،،،،،، ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نہیں ، میرا ابا ڈاکوؤں کا ساتھی نہیں ہو سکتا، وہ چھوٹی موٹی چوری تو کر سکتا ہے مگر اتنا سنگین مجرم نہیں ہو سکتا،،، ابا نے تو میرے سر کی قسم کھائی تھی کے آئندہ کوئی غلط کام نہیں کرے گا، وہ بھلا کیسے اپنی گڈی کی جھوٹی قسم کھا سکتا ہے؟؟؟؟
معصوم گڈی کے دل و دماغ میں ابھی یہی سوالات ڈوب ابھر رہے تھے کہ باہر دروازہ پر کسی نے آواز لگائی ،،،
“فضل دین کا گھر یہی ہے”؟؟
اپنے پیارے ابا کا نام سنتے ہی وہ بیقراری سے دروازے کیطرف دوڑی،،،،،،دروازہ کھول کر اسنے دیکھا کہ ایک شخص ہاتھ میں تھیلا لئے اسکے ابا کا پوچھ رہا ہے،،،،
“جی یہی گھر ہے مگر ابا تو۔ ۔ ۔” اس سے پہلے کہ وہ مزید کچھ کہتی، دروازہ پر کھڑا شخص وہ تھیلا گڈی کیطرف بڑھاتے ہوئے بولا،،،،
یہ فضل دین کی امانت میرے پاس رہ گئی تھی، میں چونکہ اسے بہت زیادہ جانتا نہیں اس لیے بڑی مشکل سے اسکا پتہ معلوم کر کے یہاں تک پہنچا ،،،،،،،،
مگر آپ کون ہیں اور یہ تھیلا اپکے پاس کہاں سے ایا؟؟
گڈی نے اس شخص کیطرف حیرت سے دیکھتے ہوئے سوال کیا،،،،
وہ شخص گڈی سے مخاطب ہوا !!!!
“میں اور فضل دین تین روز پہلے ایک ساتھ اینٹوں کے بھٹے پر مزدوری کر رہے تھے،،، اسنے دن بھر کی سخت محنت کے بعد شام کو 500 روپے کمائے، اور ہم دونوں ایک ساتھ وہاں سے اپنے اپنے گھروں کے لیے نکلے تو راستے میں قریبی بازار سے اسنے کچھ خریدنے کی غرض سے مجھے ایک دوکان کے باہر رکنے کو کہا،
کچھ ہی دیر بعد وہ ہاتھ میں یہی تھیلا پکڑے خوشی خوشی دوکان سے باہر نکل رہا تھا کہ پولیس والوں نے اسے آ دبوچا اور گھسیٹتے ہوئے اپنی گاڑی میں ڈال کر لے گئے، اس سب میں اسکے ہاتھوں سے یہ تھیلا چھوٹ کر وہیں سڑک پر گر گیا ،،،، جسے میں نے اسکے گھر تک پہنچانا اپنا فرض سمجھا ،،،،،،،،،،
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

گڈی نے تھیلا کھولا جس میں ہلکے گلابی رنگ کا خوبصورت نیا جوڑا دیکھ کر اسکی آنکھوں میں جیسے آنسوؤں کا سمندر اتر ایا تھا،،،وہ جوڑے کو ہاتھوں میں تھامے کبھی اسے چومتی تو کبھی سینے سے لگاتی ، وہیں چوکھٹ سے ٹیک لگائے جانے کتنی دیر تک بیٹھی پھوٹ پھوٹ کر روتی رہی،،،،،،،،،،
اپنے باپ کی محنت کی کمائی سے خرید ے گئے اس جوڑے کے علاوہ جو آج اسے نصیب ہوا وہ یہ یقین تھا کہ اسکا باپ ڈاکو نہیں تھا،،،،
اسنے اپنی گڈی کی جھوٹی قسم نہیں کھائی تھی،،،،،،
البتہ گڈی کو یہ “نیا جوڑا” بہت بھاری قیمت چکا کر ملا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔

سائرہ خان

انتطامیہ اُردو صفحہ

انتطامیہ اُردو صفحہ

loading...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Top