جمہوریت کے لیے اتنا تو برداشت کرنا ہو گا

article-3.jpg

یوں لگتا ہے یہ ہمارا قومی رویہ ہے کہ اگر کوئی ہماری خامیاں بیان کرے‘ ہماری خرابیوں اور غلطیوں کے بارے میں سوال کرے تو ہم اس کا جواب دینے کے بجائے مخالف کی خامیاں‘ خرابیاں اور غلطیاں گنوانے لگ جاتے ہیں۔ سیاست دانوں میں تو یہ رویہ آپ کو ہر ٹی وی کے ٹاک شو میں بدرجہ اتم نظر آئے گا۔

اس رویے پر ہمارے دانشور‘ تجزیہ نگار اور کالم نگار اکثر تنقید کرتے نظر آتے ہیں لیکن حیرت کی بات یہ ہے کہ جب کبھی کسی نے ان کے نظریات و خیالات کی خامیوں اور خرابیوں کی نشاندہی کی‘ انھوں نے بھی اس کا جواب دینے کے بجائے تنقید کرنے والے کے نظریات و خیالات کے لتے لینے شروع کر دیے۔ اس رویے میں کمال ان دانشوروں اور تجزیہ نگاروں کا ہے جو جمہوری نظام کے مدح خواں ہیں اور اسے انسانی تاریخ کی سب سے بڑی کامیابی تصور کرتے ہیں۔

اگر جمہوریت سے جنم لینے والی ’’اکثریت کی آمریت‘‘ کے بارے میں گفتگو کی جائے تو وہ اس بہت بڑی اور بنیادی خرابی کا جواب نہیں دیں گے بلکہ فوراً اپنے آپ کو امت مسلمہ سے خارج کر کے پوری اسلامی تاریخ میں پائے جانے والی خرابیوں کا ذکر اس انداز سے کریں گے جیسے یہ کہہ رہے ہوں کہ اگر تم جمہوریت نہیں مانتے ہو تو بتاؤ مسلمانوں نے خود کونسے کارنامے تاریخ میں چھوڑے ہیں اور کونسی قابل تقلید طرز حکومت کا نمونہ پیش کیا ہے۔ حیرت کی بات یہ ہے کہ انھیں جمہوری نظام میں دفاع کے قابل صرف ایک ہی خوبی نظر آتی ہے کہ اس کے ذریعے ایک بدترین حاکم کو پانچ سال بعد حکومت سے علیحدہ کیا جا سکتا ہے جب کہ آمریت میں تو آدمی قابض ہو جائے تو پھر یا مرنے سے جاتا ہے یا پھر جنگ و جدل سے۔

کاش وہ تاریخ کے یہ ورق بھی الٹتے کہ خلافت کے اعلیٰ و ارفع نظام کے تیس سال سید الانبیاءﷺ کے تخلیق کردہ معاشرے کی مرہون منت تھے‘ جو تعصبات سے بالاتر تھا‘ ذمے داری کے خوف سے عہدہ لینے سے دور بھاگتا تھا۔ اپنے جانشین اولاد نہیں‘ اہل لوگوں کو چنتا تھا اور سب سے بڑی بات یہ کہ رائے یا ووٹ کے لیے جاننے اور نہ جاننے والے کے درمیان تمیز رکھتا تھا۔ یہ ایک ایسا جمہوری معاشرہ نہیں تھا جس میں عظیم دانشوران اور مداحین جمہوریت کی رائے یا ووٹ ڈیڑھ سو بچوں کے قاتل جاوید اقبال کے برابر ہوتا ہے۔ جہاں ایک تہجد گزار‘عابد و زاہد اور ہیروئن کا دھندہ کرنے والے سے حکومت چلانے کے لیے برابر رائے لی جاتی ہے اور ان کا وزن بھی برابر ہوتا ہے۔

ہم اپنا کاروبار چلانے‘ اپنی اولادوں کا رشتہ کرنے‘ بازار سے کوئی چیز خریدنے کے لیے بھی ان سے رائے لیتے ہیں جنھیں اس کا علم اور تجربہ ہوتا ہے۔ذاتی معاملات میں ہم جمہوری مزاج اور جمہوری رویے پر لعنت بھیجتے ہیں۔ کیا کبھی ایسا ہوا کہ کسی مالک نے اپنی فیکٹری کے مزدوروں سے ووٹ لے کر یہ فیصلہ کیا ہو کہ نیا یونٹ لگاؤں یا نہ لگاؤں‘ تمام جاننے والوں سے ووٹ لے کر بیٹی کا رشتہ کیا ہو‘ یا پھر محلے بھر کے افراد سے اکثریتی رائے کی بنیاد پر مکان میں ایک کمرے کا اضافہ کیا ہو۔ دنیا کے تمام انسانوں کی زندگیاں ہر معاملے کے بارے میں اہل الرائے یعنی رائے دینے کی اہلیت رکھنے والے اور نہ رکھنے والے کے درمیان تقسیم ہوتی ہیں۔

امریکا سے لے کر آسٹریلیا تک دنیا کے کسی ملک میں بھی کوئی شخص اپنے ذاتی معاملے میں اس شخص سے رائے نہیں لے گا جو اس معاملے میں جاہل اور لاعلم ہو۔ لیکن جمہوریت کا یہ نظام انسانی رویوں کے بالکل برعکس تخلیق کیا گیا۔ لیکن میرے اللہ نے تو انسانوں کی درجہ بندی کر رکھی ہے۔’’اے نبی‘ کہہ دو‘ کوئی برابر ہوتے ہیں سمجھ والے اور بے سمجھ‘ اور سوچتے وہی ہیں جن کے پاس عقل ہے (الزمر۔9)۔ ایک اور جگہ تو اللہ نے واضح اعلان کر دیا۔ ’’اے نبی ان سے کہہ دو کہ پاک اور ناپاک بہرحال یکساں نہیں خواہ ناپاک کی بہتات تمہیں کتنا فریفتہ کرنے والی ہو۔

بس اے لوگو‘ جو عقل رکھتے ہو‘ اللہ کی نافرمانی سے بچو‘ امید ہے تمہیں فلاح نصیب ہوگی (المائدہ 100)۔ اللہ نے بار بار قرآن پاک میں انسانوں کی اکثریت کو نہ جانے والے‘ نہ شعور رکھنے والے اور نہ عقل رکھنے والے کہا ہے بلکہ رسول اکرمﷺ کو متنبہ کرتے ہوئے فرمایا ’’اے نبی اگر تم ان لوگوں کی اکثریت کے کہنے پر چلو گے جو زمین پر بستے ہیں تو وہ تمہیں اللہ کے راستے سے بھٹکا دیں گے۔ وہ تو محض گمان پر چلتے ہیں اور قیاس آرائیاں کرتے ہیں (الانعام:116)۔ یہی اکثریت کا ظلم و ناانصافی ہے جو دنیا کی سب سے بڑی جمہوریت بھارت میں اقلیت سہہ رہی ہے اور اب امریکا کے عوام اس کا مزہ چکھیں گے۔

جمہوریت کیسے آہستہ آہستہ اکثریت کو اس بات کا احساس دلاتی ہے کہ تم اس ملک پر اپنی آمریت قائم کر سکتے ہو‘ امریکا میں ڈالے گئے گزشتہ سولہ سال کے ووٹوں کا PEW نے تجزیہ کیا ہے۔ یہ امریکا کا سب سے معتبر تحقیقی ادارہ ہے۔

اس کے نزدیک سفید فام مذہبی تعصب نے ٹرمپ کی صدارت کی راہ ہموار کی۔ یہ تعصب 2000 کے الیکشن سے آہستہ آہستہ بڑھنا شروع ہوا اور اب یہ امریکی سیاست پر مکمل طور پر چھا گیاہے۔ جارج بش نے دوسری دفعہ جب 2004 میں الیکشن لڑا تو اسے سفید فام ایویلنیجکل عیسائیوں نے 78فیصد ووٹ دیے اور کیری کو 21فیصد‘ پروٹسنٹ عیسائیوں نے بش کو59فیصد اور کیری کو 40 فیصد سفید فام کیتھولک عیسائیوں نے بش کو56فیصد اور کیری کو 43فیصد جب کہ یہی کیتھولک اگر لاطینی امریکی یعنی ہسپانوی تھے تو انھوں نے بش کو 33فیصد اور کیری کو 65فیصد ووٹ دیے۔

لوگ جو مذہب کو نہیں مانتے تھے ان میں سے 67فیصد نے کیری کو 31فیصد نے بش کو ووٹ دیا۔ چونکہ بش ایک شدت پسند اور مسلمانوں کے خلاف جنگ کا علمبردار تھا‘ اس لیے سفید فام عیسائی اکثریت نے اسے منتخب کروایا۔ یہ تعصب آہستہ آہستہ نکھرتا گیا اور ٹرمپ کو سفید فام ایویلنیجکل عیسائیوں نے 81فیصد‘ پروٹسنٹ عیسائیوں نے 58فیصد‘ سفید فام کیتھولک نے 60فیصد‘ اور عیسائیوںکے ایک صوفیانہ گروہ مورمون Mormon نے 61فیصد ووٹ ڈالے جب کہ ہلیری کلنٹن کو لا مذہب لوگوں نے 68فیصد اور ہسپانوی عیسائیوں نے 67فیصد ووٹ ڈالے۔ ٹرمپ امریکی جمہوریت میں سفید فام عیسائی اکثریت کے تعصب کو آہستہ آہستہ اس مقام پر لانے کی علامت ہے جہاں کئی سو سال بعد گوروں نے ایک بار پھر امریکا کو فتح کیا ہے اور یہ صرف ایک جمہوری نظام میں ہی ممکن ہے۔

جمہوریت کی جب بات ہوتی ہے تو اس کی اعلیٰ صفات اور اقدار کی بات ہوتی ہے‘ کوئی دنیا میں نافذ بدترین جمہوری حکومتوں کا ذکر نہیں کرتا‘ اچھی مثالیں دے کر ثابت کیا جاتا ہے کہ یہ بہتر نظام ہے‘ آمریت کو گالی دینا ہو تو کسی کو سنگاپورکا لی کوآن ہوا یاد نہیں آتا‘ کوئی مہاتیر محمد کا نام نہیں لیتا جو اقتدار چھوڑ رہا تھا تو قوم رو رہی تھی۔ کوئی معیشت دانوں کے بتائے اس اصول کو بیان نہیں کرتا کہ قوموں کی ترقی ہمیشہ ایک خیرخواہ (Benevolent) آمر کے زمانے میں ممکن ہوتی ہے۔

کوئی چین کی ترقی کا ذکر نہیں کرے گا۔ اسلام میں رائے کے لیے ایک معیار مقرر ہے۔ اگر ووٹ دینے کے لیے 18سال کی عمر کی شرط رکھی جا سکتی ہے تو پھر مزیدشرائط کے طور پر پڑھا لکھا ہونا‘ ایماندار ہونا‘ جرم سے پاک ہونا جیسی شرائط رکھ کر ووٹنگ کارڈ بھی جاری کیا جا سکتا ہے۔ یہ سب کوئی مشکل کی بات نہیں۔ یہ سب ممکن ہے اگر نیت نظام کے نفاذ کی ہو۔ آمریت میں تو آمر کے خلاف جلوس نکال کر تحریک چلا کر اسے نکالا جا سکتا ہے کیونکہ آمر ایک گالی ہوتا ہے۔ لیکن اگر جمہوریت میں اکثریت کی آمریت نافذ ہو گئی اور پھر وہ تاریک رات کی طرح سالوں پر محیط ہو گئی تو ایسے ظالموں کو تخت سے کون اتارے گا۔

اقلیت کو اکثریت کے عذاب سے نجات کون دلائے گا‘ کیا ملک سے وہ ہجرت کر جائیں جیسے ٹرمپ کے جیتنے کے بعد امریکا کے عوام نے کینیڈا‘ آسٹریلیا اور نیوزی لینڈ جیسے ملکوں میں شہریت کی اتنی درخواستیں جمع کروائیں ہیں کہ ان کے سسٹم بیٹھ گئے ہیں۔ لیکن ان لوگوں کے ان ملکوں میں جانے سے اگر وہاں بھی اکثریت کا تعصب جاگ گیا تو پھر کیا ہو گا۔ میرے عظیم دانشور کندھے اچکا کر کہیں گے جمہوریت میں اتنا تو برداشت کرنا ہو گا۔لیکن جو اپنا جمہوری وطن چھوڑ کر بھاگے اور دوسرے جمہوری ملک میں بھی اکثریت کی آمریت کے ظلم کا شکار ہو گئے تو ان کے لیے بقول ذوق

اب تو گھبرا کے یہ کہتے ہیں کہ مر جائیں گے
مر کے بھی چین نہ پایا تو کدھر جائیں گے

تحریر :اوریا مقبول جان

اوریا مقبول جان

اوریا مقبول جان پاکستان کے معروف کالم نگار، شاعر، دانشور، ناٹک نگار اور کئی کتابوں کے مصنف ہیں۔ بطور ستون نگار و دانشور ان کے ستون باقاعدگی کے ساتھ پاکستان کے معروف اردو اخبار روزنامہ ایکسپریس میں شائع ہوتے رہتے ہیں۔ وہ اپنی شاعری اور منفرد انداز تحریر کے باعث کئی ادبی اعزازات حاصل کر چکے ہیں، ا

loading...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Top